وکی پیڈیا کے مطابق رسولن بائی (Rasoolan Bai)، بنارس گھرانے سے تعلق رکھنے والی مشہور گلوکارہ، 15 دسمبر 1974ء کو بنارس، اُترپردیش میں انتقال کرگئیں۔
سنہ 1902ء کو مرزا پور، اُترپردیش میں پیدا ہوئیں۔ خاندان غربت زدہ تھا، لیکن گلوکاری اور موسیقی اُن کو وراثت میں ملی۔ 5 سال کی عمر میں استاد شمو خان کے پاس بھیجی گئیں، تاکہ موسیقی کی تعلیم حاصل کرسکیں۔ بعد ازاں سارنگی نواز استاد عاشق خان اور استاد نجو خان سے سارنگی پر موسیقی سیکھی۔
رسولن بائی کو پورب انگ ٹھمری میں پوربی گیت، کجری، چیتی اور دادرا گانے پر عبور حاصل تھا۔ 1948ء میں مجرا کرنا بند کر دیا اور واپس اپنے آبائی کوٹھے پر لوٹ گئیں۔ تمام عمر بنارس میں گزاری اور بنارس کے ایک ساڑھیوں کے تاجر سے شادی کی۔ محافل اور تقاریب میں اپنی ہم عصر گلوکارہ سدیشوری دیوی کے ساتھ گایا۔ لکھنؤ اور اِلٰہ آباد سے آل انڈیا ریڈیو کے لیے گایا۔اس کے علاوہ دوردرشن پر انتقال تک مختلف گیت ریکارڈ کروائے ۔ عوامی سطح پر آخری بار کشمیر میں منعقدہ ایک تقریب میں گایا۔ آخری عمر کس مہ پرسی میں گزری جب کہ وہ وارانسی میں مقیم تھیں۔ 1969ء میں وارانسی میں فسادات کی وجہ سے گھر آتش زدگی میں آگیا، جس کے بعد آخری عمر تکلیف میں گزری۔
1957ء میں رسول بائی کو سنگیت ناٹک اکیڈمی ایوارڈ برائے گلوکارہ سے نوازا گیا۔