ترجمہ: ریحان کاظمی 
ہندوستان کی موجودہ حکم راں جماعت ’’بھارتیہ جنتا پارٹی‘‘ نے 1989ء میں ’’ہندوتوا‘‘ کو باضابطہ طور پر اپنے نظریہ کے طور پر اپنایا۔ یہ وہ نظریہ ہے جسے ہندو قوم پرست رضاکار تنظیم ’’راشٹریہ سویم سیوک سنگھ‘‘ (آر ایس ایس) نے 1925ء میں پیش کیا تھا…… اور اس سے وابستہ تنظیموں کے خاندانوں کے ذریعہ پرچار کیا گیا تھا۔ ’’سنگھ پریوار‘‘ میں، خاص طور پر وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی، ورلڈ ہندو کونسل)، جس کا قیام 1964ء میں عمل آیا جس کا بنیادی کام اس نظریہ کو واضح تحفظ اور فروغ دینا تھا۔
ہندو مذہب میں لفظ ’’ہندوتوا‘‘ کو بڑے پیمانے پر استعمال کیا جاتا ہے…… لیکن اس اصطلاح کا اصل مطلب کیا ہے؟
’’ہندوتوا‘‘ لفظی طور پر ہندویت کے تصور کی ایجاد کا سہرا جس شخص کو دیا جاتا ہے، وہ ونائک دامودر ساورکر (1883-1966) ہیں، جن کے ’’ہندوتوا‘‘ کے لوازمات (بمبئی: ویر ساورکر پرکاشن، 1st ایڈیشن 1923ء) نے اس تصور کو پیش کیا۔ 1928ء میں ’’ہندوتوا: ہندو کون ہے؟‘‘ کے نام سے دوبارہ شایع ہوا، یہ کئی طریقوں سے ہندو قوم پرست عقیدہ کا بنیادی متن ہے۔
ساورکر نے نسلی، ثقافتی اور سیاسی لحاظ سے ’’ہندو ہونے کے معیار‘‘ کو بیان کرنے کے لیے ’’ہندوتوا‘‘ کی اصطلاح کا انتخاب کیا۔ اس نے دلیل دی کہ ہندو وہ ہے جو ہندوستان کو اپنی مادرِ وطن (جنم بھومی)، اپنے آباؤ اجداد کی سرزمین (پتر بھومی) اور اپنی مقدس سرزمین (پونیہ بھومی) سمجھتا ہے۔
ہندوستان، ہندوؤں کی سرزمین ہے۔ کیوں کہ ان کی نسل ہندوستانی ہے اور چوں کہ ہندو عقیدے کی ابتدا ہندوستان میں ہوئی ہے (دوسرے عقیدے جو ہندوستان میں پیدا ہوئے، جیسے سکھ مت، بدھ مت اور جین مت بھی، سرواکر کی شرایط میں، ہندو مت کی مختلف شکلوں کے طور پر اہل تھے۔ کیوں کہ انہوں نے انہی تین معیارات کو پورا کیا؛ لیکن اسلام اور عیسائیت، جو ہندوستان سے باہر پیدا ہوئے، نے ایسا نہیں کیا۔) اس طرح ایک ہندو کوئی ایسا شخص ہے جو ہندو والدین سے پیدا ہوا ہو، جو بھارت کو ’’بھارت ورشا کی سرزمین، سندھ سے سمندر تک‘‘ اپنی جنم بھومی کے ساتھ ساتھ اپنی مقدس سرزمین، ’’یہ اپنے مذہب کا گہوارہ سرزمین‘‘ مانتا ہے ۔
لیکن یقینا ’’ہندوتوا‘‘ کا تصور کوئی معنی نہیں رکھتا جب تک کہ اسے ہندو مت کے مذہب کے حوالے سے بیان نہ کیا جائے۔ تو ساورکر نے زور دے کر کہا: ’’ہندومت صرف ایک مشتق، ایک حصہ، ہندوتوا کا ایک حصہ ہے۔‘‘
ان کے نزدیک مذہب اس کے مترادف ہونے کے بجائے سیاسی نظریے کا ایک ذیلی حصہ تھا…… جس پر آج اس کے بہت سے حامی حیران ہوں گے۔ تاہم ساورکر نے دلیل دی کہ ’’ہندوتوا اور ہندوازم کے درمیان فرق کرنے میں ناکامی نے ان بہن برادریوں میں سے کچھ کے درمیان بہت زیادہ غلط فہمی اور باہمی شکوک و شبہات کو جنم دیا ہے جنہیں ہماری ہندو تہذیب کا یہ انمول اور مشترکہ خزانہ وراثت میں ملا ہے کہ ہندوتوا اس بات سے مماثل نہیں ہے جسے ہندوازم کی اصطلاح سے مبہم طور پر ظاہر کیا گیا ہے۔‘‘
ایک ’’ازم‘‘ سے اس کا مطلب عام طور پر ایک نظریہ یا ضابطہ ہوتا ہے، جو کم و بیش روحانی یا مذہبی عقیدہ یا نظام پر مبنی ہوتا ہے…… لیکن جب ہم کوشش کرتے ہیں ہندوتوا کی اہمیت کے بارے میں تحقیق کریں، ہم بنیادی طور پر اور یقینی طور پر بنیادی طور پر اپنے آپ کو کسی خاص تھیوکریٹک یا مذہبی عقیدہ یا عقیدے سے پریشان نہیں کرتے ہیں…… دوسرے لفظوں میں، ہندوتوا ہندو مذہب سے زیادہ ہے، اور ایک سیاسی فلسفہ کے طور پر یہ خود کو ہندو مذہب کے ماننے والوں تک محدود نہیں رکھتا۔ اس فرق کے باوجود، ہندوتوا ہندو لوگوں کے سیاسی استحکام کو حاصل کرنے میں مدد کرے گا، کیوں کہ ساورکر نے یہ بھی دلیل دی تھی کہ ایک مسلمان یا عیسائی، چاہے وہ ہندوستان میں پیدا ہوا ہو، ہندوتوا کے تین بنیادی اصولوں کی وفاداری کا دعوا نہیں کرسکتا: ’’ایک مشترکہ قوم (راشٹر)، ایک مشترکہ نسل (جاتی) اور مشترکہ تہذیب (سنسکرت)، جیسا کہ مشترکہ تاریخ، مشترکہ ہیروز، مشترکہ ادب، مشترکہ آرٹ، مشترکہ قانون اور مشترکہ فقہ، مشترکہ میلے اور تہوار، رسومات اور تقاریب۔‘‘
(ششی تھرور کی کتاب ’’مَیں ہندو کیوں ہوں؟‘‘ سے انتخاب)
……………………………..
لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ [email protected] یا [email protected] پر اِی میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔