آج خواتین کے عالمی دن کے موقع پر بڑی بڑی تقریبات، ریلیاں، کانفرنسز منعقد ہوتی ہیں، جب کہ یہ ایک المیہ ہے کہ تحفظِ حقوقِ نسواں کے علم بردار مغربی ممالک میں خواتین کو سب سے زیادہ جنسی زیادتی اور سماجی عزت و احترام سے محرومی کا سامنا ہے۔
عورت…… خواہ وہ ماں ہو، بیوی ہو، بہن ہو، بیٹی ہو یا کہ معاشرے کی کوئی عورت، غریب ہو یا مالدار کسی بھی رنگ و روپ میں ہو، انتہائی قابلِ احترام اور مقدس ہستی ہے۔ انسانی حقوق کے نام نہاد علم بردار آزادیِ نسواں کا نعرہ لگا کر ان کے تقدس کو پامال کرنا چاہتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ آج دنیا کے بڑے بڑے غیر مسلم ممالک اپنی ننگی تہذیب سے تنگ آکر تیزی سے دینِ فطرت اسلام کی طرف لوٹ رہے ہیں اور سچے دل سے اسلام کو قبول کر رہے ہیں۔ بلاشبہ عورت کو دنیا بھر کی اقوام و مذاہب میں سب سے زیادہ حقوق اسلام نے دیے ہیں، اوراسلام میں اسے ہر لحاظ سے بلند مقام عطا کیا گیا ہے۔ اسلام جدید معاشرے کی عورت کو بھی وہی حقوق، عزت و وقار، عزتِ نفس دیتا ہے جو اس نے پس ماندہ عورت کو عطا کیے ہیں۔ کیوں کہ اسلام نہ صرف خواتین یا محض کوئی ایک طبقہ، بلکہ فلاحِ انسانیت کا عالم گیر دین ہے۔ خاندانی نظام، شرم و حیا، عورت کا احترام یہ وہ معاملات ہیں جن کا تعلق صرف خواتین سے نہیں بلکہ ان کا تعلق معاشرے کے ہر فرد سے ہے۔
رانا اعجاز حسین چوہان کی دیگر تحاریر پڑھنے کے لیے نیچے دیے گئے لنک پر کلک کیجیے:
https://lafzuna.com/author/rana/
اسلامی تہذیب و ثقافت کے رنگ تو یہ ہیں کہ مرد اور عورت اپنی اپنی ذمے داریاں ادا کریں۔ مرد معاش کی فکر کرے جب کہ عورت (بیوی) شوہر کی خدمت، گھر کے مال ومتاع کی حفاظت، بچوں کی پرورش اور تربیت کو اپنی ذمے داری سمجھے…… لیکن دین سے دوری، حقوق و فرائض میں غفلت، اپنی تہذیب و ثقافت سے نفرت، فلموں، ڈراموں اور مغربی تہذیب کی اندھی تقلید نے ہمارے شہوانی جذبات اور ہوس کو اس حد تک ابھار رکھا ہے کہ اپنے جذبات کی تکمیل کے لیے ہر حد پھلانگ لی جاتی ہے۔ اغیار کی تقلید میں پاکستان میں بھی بیش تر خواتین کے حالاتِ زندگی ہر گزرتے دن کے ساتھ تنگ ہوتے جا رہے ہیں۔ گھریلو ماحول مجموعی طور پر تناو کا شکار ہے اور سماجی رشتے تیزی سے ٹوٹ پھوٹ رہے ہیں۔ طلاقوں اور خودکشیوں کے علاوہ عورتوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات میں روز بہ روز اضافہ ہورہا ہے۔ گھریلو حالات، غربت، افلاس، تنگ دستی، محرومی اور مہنگائی کے ہاتھوں تنگ اور مجبور عورت جب روزگار کی تلاش میں باہر نکلتی ہے، تو وہاں بھی اسے جنسی طور پر ہراساں کیا جاتا ہے۔ اگر ملازمت مل جائے، تو سماج میں موجود مردوں کی حاکمیت کے باعث انھیں ہر وقت جنسی تفریق کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ہمارے معاشرے میں خواتین سے جو زیادتیاں ہوتی ہیں، انھیں روکنے کے ساتھ ساتھ آزادی اور حقوقِ نسواں کے نام پر پاکستانی عورت کو اس استحصال اور ظلم سے محفوظ کیا جائے جس کا شکار مغرب کی عورت ہو چکی ہے اور جسے ترقی اور آزادی کے نام پر کھلونا بنا دیا گیا ہے۔
دیگر متعلقہ مضامین:
حجاب، حیا کی علامت 
آزادیِ نسواں اور زمینی حقائق  
ونگری ماتھائی، ایک ناقابلِ شکست عورت کی کہانی  
نرگسیت پسند خواتین 
عورت اور بناو سنگار 
اسلام ہمیں والدین کا احترام یا خواتین پر تشدد کا تدراک ہی نہیں ایک بہتر انسان بننے کی بھی ترغیب دتیا ہے۔ اسلام کے رہنما اصولوں پر چلتے ہوئے ہم برائی کے برے انجام اور اچھائی کے اچھے نتائج سے واقف ہوتے ہیں۔ دین سے دوری کے باعث آج ہمارے معاشرے میں کارو کاری، وٹہ سٹہ، ونی اور ستی جیسے جاہلانہ رواج عروج پر ہیں، جہاں عورت کو حقیر اور کم تر سمجھا جاتا ہے۔ راہ چلتے عورتوں پر آوازیں کسنا، مذاق اُڑانا اور غیر اخلاقی الفاظ کا استعمال معمول سمجھا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ تیزاب پھینک کر عورتوں کی شکلیں بگاڑ کر انھیں عمر بھر کے لیے بے سہارا چھوڑ دیا جاتا ہے۔ اس دور میں بھی دورِ جہالت کے پیروکار موجود ہیں۔ کسی کی بہن کی اگر آبرو ریزی ہوجائے، تو بھائی بجائے یہ کہ اپنی بہن کے ساتھ ہونے والی زیادتی پر مجرم کو قانون کے کٹہرے میں لائے۔ اپنی بہن ہی کو قتل کردیتا ہے۔ کہیں کوئی شخص کسی کی بہن کے ساتھ زیادیتی کرتا ہے، تو جواب میں اس مجرم کی بہن کے ساتھ اجتماعی زیادتی کرنے کا جاہلانہ پنچائتی فیصلہ دے دیا جاتا ہے۔
بلاشبہ اسلامی تعلیمات پر عمل پیرا ہوکر یہ ممکن ہے کہ ہم فلاح اور اچھے برے راستوں کی پہچان پاسکیں۔ اسلامی تعلیمات ہمیں یہ درس دیتی ہیں کہ اگر انسان اپنے اندر نیکی اور اچھائی کو فروغ دے گا، تو دنیا کی زندگی میں بھی سکون غالب رہے گا اور اس دنیا سے رخصت ہونے کے بعد بھی بڑی پُرلطف اور رنگینیوں سے بھر پور زندگی اس کا مقدر ہوگی۔ خواتین کے عالمی دن کے موقع پر محض دعوؤں، ریلیوں اور سیمیناروں سے کوئی تبدیلی نہیں آئے گی، بلکہ معاشرے میں خواتین کے مقام کو کھلے دل، کھلے ذہن سے تسلیم کرنا ہوگا۔ اور خواتین کو بھی حیا کے دائرے میں رہتے ہوئے اپنے حقوق و فرائض کو پہچاننا ہوگا، تاکہ ایک بہترین فلاحی معاشرے کا قیام عمل میں آسکے۔
……………………………………
لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ editorlafzuna@gmail.com یا amjadalisahaab@gmail.com پر اِی میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔