قارئین! گجرات شہر کے باسیوں کی عرصہ دراز سے تمنا تھی کہ ان کے شہر کو ڈویژن کا درجہ دیا جائے۔ پنجاب کا وزیرِ اعلا منتخب ہوتے ہی چوہدری پرویز الٰہی نے اپنے شہر کو ڈویژن کا درجہ دے دیا۔
دو دریاؤں کے درمیان آباد یہ شہر آبادی کے لحاظ سے پاکستان کا 20واں بڑا شہر ہے۔ سیالکوٹ اور گوجرانوالہ کے قریبی شہروں کے ساتھ ساتھ گجرات صنعتی شہروں کے سنہری مثلث کا حصہ ہے…… جس میں برآمدات پر مبنی معیشتیں ہیں۔
گجرات کے آس پاس کا علاقہ مغلوں سے پہلے سوری حکم ران شیر شاہ کے دور میں آباد ہوا تھا۔ سوری کے روہتاس کے گورنر خواص خان کے اعزاز میں اس علاقے کا نام خواص پور رکھا گیا تھا۔ گجرات اس علاقے میں تعمیر ہونے والا دوسرا قصبہ ہے…… جس کا پہلا شہر 1303ء میں منگول حملوں سے تباہ ہوا تھا۔ یہ شہر مغل سلطنت کے تحت آیا اور مغل شہنشاہ اکبر اعظم کے دور میں مزید ترقی ہوئی۔1580ء میں گجرات کا قلعہ تعمیر کیا اور مقامی پادری گجروں کو1596-97ء میں شہر میں آباد ہونے پر مجبور کیا۔ تب اس شہر کا نام گجر قبائل کے حوالے سے رکھا گیا تھا۔
1605ء میں عبدالقاسم کو اکبر نے شہر کو جاگیر کے طور پر عطا کیا تھا۔ شہنشاہ جہانگیر کے دور میں گجرات اس راستے کا حصہ تھا، جسے مغل شاہی کشمیر کے دورے پر استعمال کرتے تھے۔
گجرات کے سب سے مشہور سنت شاہ دولہ کو سکھ گرو ہرگوبند سے اس شہر کو بچانے کا سہرا دیا جاتا ہے۔ گجرات کا سکندریہ پل دریائے چناب پر پھیلا ہوا ہے اور برطانوی دور میں بنایا گیا تھا۔
1707ء میں اورنگ زیب کی موت کے ساتھ ہی مغل سلطنت نمایاں طور پر کم زور ہونے لگی…… جو اختیار قایم رہا وہ مغل نوابوں کے ہاتھ میں رہا، جنہوں نے دہلی میں مغل بادشاہ سے برائے نام بیعت کی، تاہم 1739ء میں طاقت ور ترک ایرانی حکم ران نادر شاہ نے مغلوں کو آخری دھچکا دیا…… جب اس نے ان کی راجدھانی دہلی کو برطرف کرتے ہوئے لوٹ مار کا آغاز کیا۔ اپنی مہم کے دوران میں نادر شاہ نے گجرات کو راستے میں ہی توڑ دیا، جو اس وقت ایک خوشحال شہر تھا۔
1741ء کے کچھ عرصے بعد راولپنڈی کے علاقے کے قریب سے ہونے والی افراتفری میں مقامی پنجابی گکھڑ قبائلیوں نے شہر پر قبضہ کر لیا۔ 1748ء اور 1767ء کے درمیان اپنے نئے پرجوش حکم ران احمد شاہ درانی کے دور میں درانی افغانوں کے آٹھ حملوں سے شہر کو مزید نقصان اٹھانا پڑا۔
1765ء میں گجر سنگھ کے ماتحت سکھ بھنگی مل نے اس شہر پر قبضہ کرلیا جس نے مقرب خان کے ماتحت پنجابی گھاکروں کو شکست دی۔ سکھوں نے 29 اپریل 1797ء کو گجرات کی لڑائی میں افغان فوج کو شکست دی۔ 1798ء میں بھنگی لیڈر صاحب سنگھ نے رنجیت سنگھ کی سوکرچکیا مِل سے بیعت کی…… جس نے بعد میں 1799ء میں سکھ سلطنت قایم کی۔ 1810ء میں رنجیت سنگھ کی فوجوں نے شہر پر بھنگی افواج سے قبضہ کرلیا۔ اس طرح سکھ سلطنت کی حکم رانی شہر تک پھیل گئی۔
22 فروری کو گجرات کی جنگ میں سکھوں کی شکست کے نتیجے میں سکھ سلطنت کے خاتمے کے بعد آخرِکار 1849ء میں گجرات برطانوی کنٹرول میں آگیا…… جس سے ’’دوسری اینگلو سکھ جنگ‘‘ ختم ہوئی۔ 1867ء میں گجرات کو میونسپلٹی کے طور پر تشکیل دیا گیا تھا۔
مردم شماری کے مطابق شہر کی آبادی اس وقت تقریباً پانچ لاکھ ہے۔ گجرات پاکستان کا ایک قدیم شہر ہے جو دو مشہور دریاؤں ’’جہلم‘‘ اور ’’چناب‘‘ کے درمیان واقع ہے۔ اس کی سرحد شمال مشرق میں آزاد کشمیر سے، شمال مغرب میں دریائے جہلم سے، مشرق اور جنوب مشرق میں دریائے چناب کے کنارے سے ملتی ہے…… جو اسے گوجرانوالہ اور سیالکوٹ کے اضلاع سے الگ کرتا ہے۔ مغرب میں منڈی بہاؤالدین ضلع ہے۔
گجرات تین تحصیلوں سرائے عالمگیر، کھاریاں اور گجرات پر مشتمل ہے اور اس ڈویژن میں تین اضلاع گجرات، منڈی بہاؤالدین اور حافظ آباد شامل ہیں۔
گجرات سے تعلق رکھنے والی قابل ذکر شخصیات میں چوہدری پرویز الٰہی سابق نائب وزیرِ اعظم پاکستان، سابق سپیکر پنجاب اسمبلی، سابق چیئرمین ضلع کونسل گجرات، سابق صوبائی وزیر بلدیات و دیہی ترقی، سابق اور موجودہ وزیرِ اعلا پنجاب، چوہدری وجاہت حسین اوران کے بیٹے چوہدری حسین الٰہی ایم این اے،چوہدری ظہور الٰہی (شہید) سابق رکن قومی اسمبلی قومی اسمبلی،مونس الٰہی رکن قومی اسمبلی اوردو مرتبہ پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے۔
…………………………………….
لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ [email protected] یا [email protected] پر اِی میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔